Muhaddith-e-Darul Uloom Deoband Hazrat Maulana Riyasat Ali Zafar Bijnori rh

محدثِ دارالعلوم دیوبند حضرت مولانا ریاست علی ظفرؔ بجنوری رحمۃ اللہ علیہ
ندیم احمد انصاری

اس دارِ فانی میں جو بھی آیا ہے ہر ایک کو جانا ہے، موت ایک ایسی حقیقت ہے جس کا کوئی منکر نہیں، لیکن ظاہر ہے کہ باکمال شخصیات کا اس دنیا سے چلے جانا باقی رہنے والوں کے لیے غم و اندوہ اور آزمائش کا سبب ہوا کرتا ہے۔ دارالعلوم دیوبند جو کہ بھارت کے مسلمانوں کی مرکزی دینی درس گاہ ہے اور جس سے منسلک اکابرین کو دنیا بھر میں بزرگی حاصل ہے، گذشتہ چند مہینوں میں اس پر متعدد اہم شخصیات کی جدائی کے غم کے پہاڑ ٹوٹے ہیں، جن میں درجِ ذیل حضرات خصوصیت سے قابلِ ذکر ہیں:حضرت مولانا عبد الحق صاحب اعظمی رحمۃ اللہ علیہ (نائب شیخ الحدیث، متوفی 31 دسمبر 2016ء)،حضرت مولانا کفیل احمد علوی رحمۃ اللہ اللہ علیہ (ناظم شیخ الہند اکیڈمی، متوفی 12مارچ 2017ء)،حضرت مولانا ازہر رانچی (رکن مجلسِ شوریٰ، 13مئی 2017ء)، حضرت مولانا قاری سید فخر الدین صاحب رحمۃ اللہ علیہ (ناظم شعبۂ تنظیم و ترقی، 16 مئی 2017ء)۔ابھی اِنھی غموں میں دارالعلوم اشک بار تھا کہ 23 شعبان المعظم 1438ھ یعنی 20 مئی 2017ء کی صبح سے سوشل میڈیا پر ایک اندوہ ناک خبر گردش کرنے لگی کہ دارالعلوم دیوبند کے ایک اور قدیم استاذِ حدیث حضرت مولانا ریاست علی صاحب بجنوری رحمۃ اللہ علیہ ربِ حقیقی سے جا ملے۔اللہ تعالیٰ حضرت موصوف کو غریقِ رحمت کرے، انا للہ وانا الیہ راجعون۔

حضرت موصوف ایک شفیق استاذ، محقق عالمِ دین، یادگارِ سلف اور عمدہ شاعر تھے۔ بہ حیثیت استاذ ان کی شان جاننی ہو تو ان ہزارہا قاسمیوں سے پوچھیے جنھوں نے موصوف کے سامنے زانوے تلمذ طے کیا، ان کی شانِ علمی کا کچھ اندازہ کرنا ہو تو ان کے تحاریر و تصانیف کا مطالعہ کیجیے اور ان کے شاعرانہ انداز سے محظوظ ہونا ہو تو ان کے اشعار پر نظر ڈالیے۔آپ کے ایک شاگرد نے درست لکھا ہےکہ یوں تو اردو زبان روزِ اوّل ہی سے اپنی گونا گوں خصوصیات کی بنا پر لوگوں کی منظورِ نظر رہی ہے اورآج اپنی بوقلمونی سے لوگوں کے ذہن و دماغ کو مسخر کررہی ہے۔ اس زبان کے ارتقائی سفر میں جہاں ادبا کا کردار انتہائی روشن رہا، وہیں اس زبان کو اوجِ ثریا پر پہنچانے میں شعرا کا بھی اہم رول رہا ہے، بلکہ شاعری کو تو اردو ادب کی جان کہا گیا ہے۔دبستانِ اردو کے انھیں متنوع پھولوں میں سے ایک خوبصورت نام ”مولانا ریاست علی ظفر صاحب“ کا بھی ہے، آپ جہاں ایک ذی استعداد عالمِ دین، مقبول مدرس، ماہر منتظم اور صاحبِ طرز ادیب ہیں، وہیں آپ کے ذوقِ سخن کی رفعت اور شاعرانہ عظمت لوگوں کے دلوں پر حکم رانی کرتی ہوئی نظر آرہی ہے۔

READ  Zakat ke zaroori ahkam-o-masail, Nadeem Ahmed Ansari

راقم الحروف کو حضرت موصوف سے تلمذ کا شرف حاصل نہیں، البتہ اپنی تصانیف کے مسودے حضرت کی خدمت میں پیش کرنے کا موقع ملا اور اکثر فون پر رابطہ رہا کرتا تھا، حضرتِ والا پیرانہ سالی کے عذر کے باوجود ہمیشہ اپنی نیک دعاؤں سے نوازتے رہتے۔ حضرت موصوف کی مقبولیت کا اندازہ اس سے بھی ہوگا کہ اس مطلبی دنیا میں آج جہاں دیکھیے ان کی رحلت کے غم کا چرچہ ہے، آخر کیوں نہ ہو کہ علم و ہدایت و شفقت کا بادل جوارِ رحمت میں جا کر آنکھوں سے اوجھل ہو گیا؎
ہر بوند ہے جس کی امرت جل، یہ بادل ایسا بادل ہے

حضرت موصوف کا نام ریاست علی، تخلص ظفرؔ، والدِ گرامی کا نام منشی علی اور جائے پیدائش محلہ حکیم سرائے، علی گڑھ تھا۔9مارچ 1940ء کو ولادت ہوئی، 1951ء تک پرائمری چہارم اور علی گڑھ سے ادیب کامل کی تعلیم حاصل کرنے کے بعد 1958ء میں دار العلوم دیوبند سے دورۂ حدیث سے فراغت حاصل کی اور 1972ء میں دارالعلوم دیوبند میں بہ حیثیت استاذ تقرر عمل میں آیا۔ آپ کی تصانیف میں ایضاح البخاری شرح اردو صحیح البخاری اور شعری مجموعہ نغمۂ سحر خصوصیت سے قابلِ ذکر ہیں۔آپؒ نے دارالعلوم دیوبند میں تدریس کے ساتھ ساتھ دیگر ذمے داریاں بھی سنبھالی، من جملہ ان کے آپ 1402 ھ تا 1404ھ دارالعلوم کے موقر رسالے ماہ نامہ دارالعلوم کے مدیر رہے، 1405ھ میں آپ کو مجلسِ شوری نے ناظمِ مجلسِ تعلیمی بنایا اور 1408ھ میں آپ کو شیخ الہند اکیڈمی کا نگراں مقرر کیا گیا۔اس طرح دارالعلوم میں تقرر سے لے کر تا دمِ آخر آپ نے اپنی پوری زندگی حدیثِ نبوی کے پڑھنے پڑھانے اور چمنِ قاسمی کو سرسبز و شاداب کرنے میں گزار دی اور جس وقت یہ مضمون سپردِ قلم کیا جا رہا ہےاس وقت اس مردِ مومن کی نمازِ جنازہ کی صفیں بنائی جا رہی ہوں گی۔ قابلِ رشک ہے آپ کی زندگی کہ آپ نے شہرت کے تمام موقعوں کے باوجود نہایت شریفانہ انداز میں سادگی کے ساتھ زندگی بسر کی اور یہ پیغام دیا؎
یوں سینۂ گیتی پر روشن اسلاف کا یہ کردار رہے
آنکھوں میں رہیںانوار حرم، سینے میں دل بیدار رہے

READ  Imaan-o-yaqeen ki quwwat ke sath qayam-e-taraweeh

حضرت موصوف نے اپنی زندگی اسلاف کے طرز پر اس شان سے گذاری کہ اس پر جتنا رشک کیا جائے کم ہے۔ آپ گول مول باتیں کرنے کے عادی نہ تھے، جس پر آپ کی تحریریں بین دلیل ہیں۔آپ کا ویژن بھی بہت صاف تھا، تعلیم اور نصابِ تعلیم کے متعلق جو سوالات اٹھائے جاتے رہتے ہیں اس میں بھی آپ بہت واضح نظریہ رکھتے تھے، ایک موقع پر اس سوال کے جواب میں کہ عصرِ حاضر میں اگر نصابِ تعلیم میں کسی قسم کی تبدیلی ہو،تو اُس کا اصول کیا ہو گا؟ آپ نے دو ٹوک الفاظ میں ارشاد فرمایا تھاکہ جس نصاب کو پڑھ کر حضرت مولانا نانوتوی ؒاِس لائق ہو ئے کہ جنھیں آج معیار قرار دیا جا رہا ہے اور آپ حضرات بھی اسی نصاب سے لائق و فائق ہوئے،اس میں کسی طرح کی ایسی ترمیم جو ہمارے اکابر کے نقشِ قدم سے ہٹ کر ہو گی،قبول نہیں کی جائے گی۔ (ماہنامہ دار العلوم:2004، ص:45)

اس وقت اس سے زائد لکھنا تو ممکن نہیں، آپ کی شان میں لکھے گئے ایک مرثیے کو سپردِ قلم کرکے بات کو ختم کرتا ہوں؎

فراست کی جہاں بانی کے فرزانے کی رحلت ہے
حریم ناز عنقا ہے صنم خانے کی رحلت ہے
سبکساری سے سینوں میں یہ کیسی آئ طغیانی
اچانک کیسے برپا ہے یہاں اشکوں کی سیلانی
بہاروں کی چراگاہ میں خزاں کی آئ رنجانی
سبھی غنچے ہیں پژمردہ لٹی ہے دل سلطانی
سجے تھی جس سے محفل اس زنخدانے کی رحلت ہے
وہ عاشق قول نبوی کا وہ عارف رازفطرت کا
وہ مصدر علم وحکمت کا وہ دلبر اہل حکمت کا
وہ شارح دل کی دنیا کا وہ مخزن شان وحدت کا
وہ شہ پر باغ قاسم کا وہ محور قلبی چاہت کا
خدا کے اک پیارے پیارے مستانے کی رحلت ہے
زباں کی چاشنی سے رس جہاں کانوں میں گھلتے تھے
جہاں پر رازتقدیس وفا کے خوب کھلتے تھے
تخیل کی عجب پرواز تھی بن پر کے اڑتے تھے
جہاں پر زمزمہ خیزی کے نغمے خوب سنتے تھے
شمع خاموش ہوتی ہے کہ پروانے کی رحلت ہے
نسیم بادیہ کی اشک افشانی کا چرچا ہے
صداے آہ وہو سے اک انوکھا شوربرپا ہے
ہتھیلی پر کلیجے ہیں دلوں میں کیف عنقا ہے
نشیمن زد میں آیا ہے عجب صرصر کا غوغا ہے
ہے صحراؤں پہ سناٹا کہ دیوانے کی رحلت ہے
ریاست وہ ریاست علم وفن کی جو جوارش تھے
سلف کی یاد برحق تھے زمانے کی وہ تابش تھے
ہراک خورد وکلاں پر مہربانی کی نگارش تھے
مصنف تھے محدث تھےخطابت کی وہ نازش تھے
کہ ان سارے خصائل کے ہی کاشانے کی رحلت ہے
خدایا مغفرت کردے چمن کی زیب وزینت کی
فصاحت اور بلاغت کی دوامی پیاری نکہت کی
ذہانت اور ذکاوت کی حقیقی شان وشوکت کی
سراپا علم وحکمت یعنی مولانا ریاست کی
جہاں پیتے تھے ہم طاہر اب اس میخانے کی رحلت ہے

READ  Tasawwuf aur Islami Tasawwuf ko samajhne ki zaroorat hai By Maulana Nadeem Ahmed Ansari

nadeem@afif.in

Check Also

Talaq ki muashirati zaroorat-o-ahmiyat, Sir Syed Ahmed Khan

5 5shares 5 5sharesREAD  Ashoora yani dus muharram me musalman kya karien

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Skip to toolbar