مرے ابو کی وہ خوشبو ، ندیم احمد انصاری

مِرے ابّو
ندیم احمد انصاری عاملؔ
مِرے ابو کی وہ خوشبو بسی اب تک ہے سانسوں میں
کہ جس کے دم بہ دم سے ہے توانائی حواسوں میں
جبیں چوڑی دمکتا رخ لبوں پر مسکراہٹ تھی
لقاءِ رب کی وہ صورت نہیں دکھتی نوابوں میں
وجود ان کا تھا وہ نعمت بدل جس کا نہیں ممکن
قدر جانی مزید اس کی زمانے کی جفاؤں میں
محبت سے بلاتے تھے مرے ابو مجھے جس دم
وہ لہجہ ڈھونڈھتا ہوں میں فقط اب تک فضاؤں میں
تمھارے پیار کی چُھوون شفا دیتی تھی ہر غم سے
نہیں تاثیر ہوتی ہے کہیں ایسی دواؤں میں
چلے جنت یوں روتا چھوڑ کر ابّو اچانک تم
اکیلا رہ گیا عامل پچاسوں ہم نواؤں میں

Mere Abbu
Nadeem Ahmed Ansari AAMIL

Mere ABBU ki wo khusboo
basi ab tak hai saanso mein
k jis ke dum ba dam se hai
tawanayi hawaaso mein

jabeen chaudi damakta rukh
labon par muskurahat thi
liqa e Rab ki wo soorat
nahi dikhti nawabo me

wujood unka tha wo nemat
badal jiska nahi mumkin
qadar jani mazeed uski
zamane ki jafaaon me

muhabbat se bulate the
mere ABBU mujhe jis dum
wo lahja dhoondata hun me
faqat ab tak fazaaon me

tumhare pyaar ki chhoowan
shifa deti thi har ghum se
nahi taseer hoti hai
kahin esi dawaon me

chale jannat yun rota chhod kar
ABBU achanak tum
akela rah gaya AAMIL
pachaso hum nawao me

  • 4
    Shares
  • 4
    Shares

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here